مجھے اللہ کے گھر جانے کا شوق ہے، چل کر نہیں جاسکتا، تیر کر جاؤں گا ۔۔ ملائیشیا سے تیر کر مکہ جانے والے نوجوان کے ساتھ کیا ہوا؟

اللہ کا گھر دیکھنا جس کو نصیب ہو جائے وہ دنیا میں خوش قسمت سمجھا جاتا ہے اور اس موقع کو پانے کے لئے لوگ زندگی بھر کوشش کرتے ہیں، محنت کرتے ہیں تاکہ حج یا عمرے کی سعادت ہی نصیب ہو جائے اور وہ اللہ کے حضور پیش ہو جائیں۔ ہر سال دنیا بھر سے لاکھوں لوگ اللہ کا گھر دیکھنے جاتے ہیں۔ مختلف ادوار میں مختلف مواقعوں پر لوگوں نے مختلف سفری طریقے اختیار کئے کوئی گیا پیدل، تو کوئی گیا گھوڑوں پر تو کسی نے سمندری جہاز کا سہارا لیا اور کسی نے ہوائی جہاز کا۔

لیکن ملائیشیا کے 28 سالہ نوجوان نے مکہ جانے کے لئے ایسا قدم اٹھا دیا کہ جان کر سب حیران رہ گئے، البتہ وہ اپنی اس کوشش میں کامیاب نہ ہوسکا۔ جب اس نے سمندر میں چھلانگ لگائی تو مقامی لوگوں نے فور پولیس کو اطلاع کی، کچھ دور تیر کر جانے کے بعد یہ پکڑا گیا، پولیس نے پوچھا کہ ایسا کیوں کیا جس پر اس نے کہا کہ: ” مجھے اللہ کے گھر جانے کا شوق ہے، مجھے نہ روکو، مجھے جانے دو، میرے پاس جانے کا کوئی ذریعہ نہیں ہے۔ ”

اس کے بعد پولیس نے اس کو حراست میں لے لیا، ملائیشیاء کی میڈیا کے مطابق: ” اس کا ذہنی توازن ٹھیک نہیں بتایا جاتا، اور اس کو ہسپتال منتقل کیا گیا ہے، تمام تر ٹیسٹ اور تفصلیات کے بعد حتمی معلومات سے آگاہ کیا جائے گا کہ آیا اس نے ایسا کیوں کیا؟ ”

Leave a Reply

Your email address will not be published.